Home / Pakistan / جاسوس پتھر اور پاکستان کا ایٹمی پروگرام

جاسوس پتھر اور پاکستان کا ایٹمی پروگرام

جاسوس پتھر اور پاکستان کا ایٹمی پروگرام

80 کی دہائی میں جاسوس پتھروں کی مدد سے پاکستان کے ایٹمی پروگرام کی جاسوسی کی جاتی رہی ہے۔ دراصل پتھروں میں خفیہ ڈیوائسز نصب تھیں اور پتھر اندر سے کھوکھلے تھے۔ اس وقت ایک لکڑہارے نے اپنا کلہاڑا تیز کرنے کی نیّت سے ایک اسی قسم کے پتھر پر جب اپنا کلہاڑا رگڑا تو اس پتھر کو کھوکھلا محسوس کیا اور اسے جب توڑا گیا تو اس میں جاسوسی کے آلات نصب پائے گئے۔دراصل امریکہ اور اسرائیل کی مشترکہ کاوشوں سے تیار کیے گئے جاسوسی کے ان آلات کو کہوٹہ کےپہاڑی علاقوں میں اُن مختلف راستوں پر نصب کیا گیا تھا جن راستوں سے پاکستان کے ایٹمی پروگرام کے لئے یورینیم سپلائی کیا جاتا تھا۔ اس واقع کے بعد ایک مربوط سرچ آپریشن کیا گیا اور اس طرح کے درجنوں پتھر دریافت ہوئے اور غیر مصدقہ اطلاعات کے مطابق جنرل ضیاء الحق نے اُن تمام پتھروں کا ایک جگہ ڈھیر لگوایا اور امریکی سفیر کو بلا کر پاکستان کے ایٹمی پروگرام کی جاسوسی پر اس کی خوب سرزنش کی۔حال ہی میں کچھ اسی طرح کے جاسوس پتھر اسرائیلی سرحد کے قریب لبنان میں دریافت کیے گئے۔

About fatima

Check Also

مسلح افواج کی قربانیوں کی بدولت ملک میں امن لوٹا

وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ مسلح افواج کی قربانیوں کی بدولت …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *