Home / World / پاکستان سےمتعلق امریکی پالیسیوں پرسابق امریکی سفیرکی تنقید

پاکستان سےمتعلق امریکی پالیسیوں پرسابق امریکی سفیرکی تنقید

نیویارک: سابق امریکی سفیر رچرڈ اولسن نے کہاہےکہ امریکا کی پاکستان سے متعلق حالیہ پالیسیاں کارگرثابت نہیں ہونگی۔ افغانستان میں امریکی دشمنوں کی حمایت کے نتیجے پرپاکستان کےخلاف کارروائی جذباتی فیصلہ ہے۔امریکی اخبار میں لکھے گئے آرٹیکل میں رچرڈ اولسن نے کہاکہ پاکستان کی پالیسیاں جاننااورامریکی آپشنزمحدود ہونے کوسمجھنے کےلیے خطےکی تاریخ اور حدود سے آگاہ ہوناہوگا۔ انھوں نے کہاکہ 1947 میں آزادی کےبعد سے پاکستان نے بطورنیشنل سیکورٹی اسٹیٹ تاثرقائم کیا جو مشرق میں موجود بھارتی عزائم کے خلاف تھا۔ رچرڈ اولسن نے لکھاہےکہ شاید ہم اس بات سے متفق نہ ہوں کہ بھارت سے پاکستان کوکیا خطرات لاحق ہوسکتےہیں،میرا تجرجہ ہےکہ تقریباتمام پاکستانی بھارت کواذلی دشمن سمجھتےہیں۔ خطے کی صورتحال کی وجہ سے پاکستان نےعسکری حل کی جانب توجہ مرکوزرکھی، جس میں پراکسی قوتوں پرانحصار بھی کیاگیا۔ ان مقاصد کے لیے پاک فوج اور بالخصوص آئی ایس آئی نے بھارت مخالف اور افغان مخالف گروہوں کو بےتحاشا سپورٹ کیارچرڈ اولسن کاکہناتھاکہ امریکا نے بھی افغان جنگ میں سوویت کےخلاف ایسے چند پراکسی گروہوں کی حمایت کی۔ یہ پالیسی اگرچہ 1989 میں ختم ہوگئی مگر پاکستان کے لیے ان گروپوں سے تعلق ختم کردینا آسان نہ تھا۔ پاکستان نے اپنی سرزمین پر موجود ایسے گروپوں اور پختونوں کی وجہ سے افغان عسکریت پسندوں سے تعلقات ختم نہیں کئے۔ پاکستان نے طالبان اور حقانی نیٹ ورک کی حمایت جاری رکھی ہوئی ہے اور اہم مواقع پر انھیں سپورٹ بھی فراہم کی ہے۔انھوں نے مزید واضح کیاکہ پاکستان کا افغان جنگ میں اہم کردار رہاہے۔ امریکا نے افغانستان میں کارروائیاں کرنے کےلیے پاکستان کی سرزمین اور فضائی حدود استعمال کئے۔ ایران کے ساتھ امریکا کے اس نوعیت کےتعلقات نہیں ہیں۔ اس حوالے سے دیگر آپسنز بھی قابل قبول نہیں۔وسطی ایشیائی ریاستوں سے بھی سپلائی لائن بنانا ممکن نہیں ہوگا۔ ایسی صورت میں پاکستان کے تعاون کے بغیر افغانستان میں امریکی فوج مچھلی بےآب کی طرح ہوجائےگی۔ 

About fatima

Check Also

سعودی فضائیہ نے داغےگئے بیلسٹک میزائل کوتباہ کردیا

سعودی فضائیہ نے یمن سے جازان کی جانب داغےگئےبیلسٹک میزائل کوتباہ کردیا۔سعودی ٹی وی کے …

One comment

  1. GOOD INFO

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *