Breaking News
Home / World / بابا وینگا کی 2018ء کے بارے میں حیران کن پیشن گوئیاں، کون غالب آئے گا

بابا وینگا کی 2018ء کے بارے میں حیران کن پیشن گوئیاں، کون غالب آئے گا

بابا وینگا کی 2018ء کے بارے میں حیران کن پیشن گوئیاں، کون غالب آئے گا۔ بلغاریہ کی خاتون بابا وانگا کی پیشین گوئیاں دنیا بھر میں مقبول ہیں ۔ وہ ایک اندھی خاتون تھی جس نے بہت سے آنے والے واقعات کے بارے میں بہت پہلے ہی لوگوں کو آگاہ کر دیا ہے۔

بابا وینگا نے 2018ء کے سال کے لیے دو پیشین گوئیاں کی ہیں۔ جن میں سے ایک یہ ہے کہ بابا وینگا نے کہا ہے کہ سال 2018ء میں چین ایک معاشی قوت بن کر ابھرے گا اور کئی لحاظ سے امریکہ کو پیچھے چھوڑ دے گا۔ دوسری پیشین گوئی ہے کہ  سیارہ وینس پر توانائی کا ایک نیا ذریعہ بھی دریافت ہوگا۔

بظاہر ان دونوں پیشین گوئیوں کے پورا ہونے میں ابھی وقت لگے گا۔ لیکن یہ کہا جا سکتا ہے ان دونوں پیشن گوئیوں کے پورا ہونے کے لیے بنیاد بن چکی ہے ۔ اس کی وجہ یہ ہے صرف ایک سال میں چین امریکہ کو پیچھے نہیں چھوڑ سکتا دوسری جانب سیارہ وینس کے قریب کسی مصنوعی سیارے یا خلائی جہاز کے پہنچنے کا کوئی امکان نہیں لیکن ایک خلائی جہاز 2018ء میں ضرور روانہ کیا جائے گا۔ یہ بات بھی جھٹلائی نہیں جا سکتی کہ چین نہایت تیزی سے ترقی کر رہا ہے اور دوسرا یہ کہ سائنس دان نت نئی دریافتیں بھی کر رہے ۔اور توانائی کے نئے ذرائع کی دریافت میں لگے ہوئے ہیں۔

بابا وینگا بلغاریہ کی رہنے والی تھی اور بچن میں ایک حادثے کا شکار ہو گئی جس کی وجہ سے وہ بینائی سے محروم ہو گئی ۔ وہ 1911ء میں پیدا ہوئی ۔ ان کے متعلق مشہور تھا کہ وہ غیرمعمولی اور پراسرار صلاحیتوں کی مالک ہیں اور ان کے علاج سے بیمار ٹھیک ہوجاتے تھے۔

بابا وینگا کے مطابق دنیا کا خاتمہ 51 صدی عیسوی میں ہوجائے گا۔

سال 2018 کےلیے انہوں نے چین کے عروج اور اس کے سپرپاور بننے کی پیش گوئی کر رکھی تھی۔ ساتھ ہی انہوں نے کہا تھا کہ اس سال سیارہ وینس میں توانائی کا ایک نیا ذریعہ دریافت ہوجائے گا۔  ناسا اگلے سال سورج کی جانب ایک خلائی جہاز روانہ کررہا ہے جسے پارکر سولر پروب کا نام دیا گیا ہے۔ پہلے اسے 2015 میں سورج کی جانب بھیجا جانا تھا لیکن اب اسے جولائی 2018 میں بھیجا جائے گا۔

About fatima

Check Also

برطانیہ میں روز رکھنے اور حجاب پر پابندی لگ گئی پانچ 5 اہکار شہید

برطانیہ میں روز رکھنے اور حجاب پر پابندی لگ گئی پانچ 5 اہکار شہید۔  یورپ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *